غیر ملکی کارکنوں کی فیس میں رعایت کسے ملے گی؟

سعودی وزارت محنت وسماجی بہبود د آبادی نے واضح کیا ہے کہ ایسے صنعتی ادارے جنہوں نے لائسنس کا اجرایکم مئی 2019 بمطابق 25 شعبان 1440 ہجری کے بعد کیا ہے وہ کارکنوں کی فیسوں میں دی جانےوالی سبسڈی کے اہل نہیں ہونگے۔
مقامی ویب نیوز اخبار 24 کے مطابق سعودی کابینہ نے گزشتہ برس صنعتی اداروں کے غیر ملکی کارکنوں پر فیسوں میں رعایت کے قانون کی منظوری دی تھی جس کے مطابق صنعتی اداروں میں کام کرنے والے غیر ملکی کارکنوں پر عائد فیسوں کی ادائیگی حکومتی خزانے سے کی جائے گی۔

کابینہ کے فیصلے میں کہا گیا تھا کہ مملکت میں صنعتی اداروں کو سہولت دینے کے لیے پانچ برس تک غیر ملکی کارکنوں پر عائد ماہانہ بنیاد پر فیسوں میں سبسڈی دی جائے گی۔ فیسوں کی ادائیگی حکومتی خزانے سے کی جائے گی۔

وزارت محنت کا کہنا تھا ’ کابینہ کے فیصلے کے مطابق ایسے صنعتی ادارے جہاں غیرملکی کارکنوں کی تعداد سعودیوں سے کم یا مساوی ہوانہیں فیسوں میں پانچ برس تک کے لیے رعایت دی جائے گی‘۔


’ ایسے ادارے جہاں غیر ملکیوں کی تعداد سعودی کارکنوں سے زائد ہو تاہم انہیں اس امر کی یقین دہانی کرانے پر فیسوں کی ادائیگی سے معاف کیاجاسکتا ہے کہ وہ مقررہ مدت کے اندر سعودی کارکنوں کی تعداد میں اضافہ کریں گے‘۔
واضح رہے مملکت میں غیر ملکی کارکنوں پر فیسوں کا نفاذ یکم جنوری 2018 سے کیا گیا تھا جس کے تحت ایسے ادارے جہاں غیر ملکی کارکنوں کی تعداد سعودی کارکنوں کے مساوی ہے ان کے ذمہ فی کارکن ماہانہ 300 ریال کے حساب سے وزارت محنت کے اکاونٹ میں جمع کرانا ہوتی تھی۔

ایسے ادارے جہاں غیر ملکی کارکنوں کی تعدا دسعودی ملازمین سے زیادہ ہوتی ہے ان پر فی کارکن ماہانہ فیس 400 ریال عائد کی گئی تھی۔فیسوں میں ہر برس 200 ریال ماہانہ کی بنیاد پر اضافہ کیاجاتاتھا۔
وزارت محنت نے واضح کیا ’ فیسوں میں رعایت کا نفاذ صرف ان صنعتی اداروں پر ہی ہو گا جن کی رجسٹریشن وزارت صنعت میں یکم مئی 2019 سے قبل کی گئی ہو‘۔
’ مذکورہ تاریخ کے بعد رجسٹرڈ اداروں پر فیسوں میں سبسڈی کا قانون نافذ نہیں کیاجائے گا وہ سابقہ نظام کے مطابق ہی فیسیں دیں گے‘۔

POST A COMMENT.